37

ملتان اور بہاولپور دونوں جگہ جنوبی پنجاب صوبے کے سیکرٹریٹ قائم ہوں گے:وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی

ملتان:وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ملتان اور بہاولپور دونوں جگہ جنوبی پنجاب صوبے کے سیکرٹریٹ قائم ہوں گے۔ اس سلسلے میں کوئی ابہام نہیں ہے اور دو سیکرٹریٹ کا نوٹیفیکیشن بھی جاری ہو چکا ہے۔ جب جنوبی پنجاب صوبہ بنے گا تو اس کی اسمبلی دارالخلافہ کا فیصلہ کرے گی، ملتان کی اہمیت سے کسی طرح بھی انکار نہیں کیا جا سکتا۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری اور ایڈیشنل ا?ئی جی قانون کے مطابق اپنی ذمہ داریاں ادا کر رہے ہیں جبکہ مختلف محکمہ جات کے سیکرٹری بھی اپنی خدمات اسی طرح انجام دیں گے کہ اب کوئی فائل لاہور لے جانے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔ ارکان اسمبلی کی موجودگی میں سرکٹ ہاوس میں پریس کانفرنس کے دوران شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان اور وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی موجودگی میں جنوبی پنجاب کے حوالے سے خاصی پیشرفت ہوئی ہے، کچھ لوگوں کی جانب سے اس پر تنقید اور بڑی تعداد میں لوگ اعتماد کا اظہار کر رہے ہیں۔ گزشتہ ستر سال سے بیرسٹر تاج لنگاہ سمیت دیگر رہنماوں کی خواہش کے باوجود صوبے کے قیام میں پیش رفت نہ ہوئی۔ محترمہ بے نظیر بھٹو اور یوسف رضا گیلانی بھی نیک خواہش کے باوجود جنوبی پنجاب صوبہ نہیں بنوا سکے۔ البتہ مسلم لیگ ن نے جنوبی پنجاب کے معاملے پر عوام میں تفریق ڈالنے کی کوشش کی۔ پی ٹی آئی حکومت نے یہ محسوس کیا کہ 12 کروڑ عوام کے ایک صوبے پنجاب کو ایک جگہ سے بیٹھ کر نہیں چلایا جا سکتا۔ ہم سے چھوٹا بھارتی پنجاب کئی ریاستوں میں تقسیم ہو چکا ہے۔ پی ٹی آئی نے جنوبی پنجاب صوبہ کو اپنے منشور کا حصہ بنایا۔ جنوبی پنجاب صوبے کی پیشرفت کا اعزاز عمران خان کے سر جاتا ہے۔ لیکن جب جنوبی پنجاب صوبے کو پارٹی منشور کا حصہ بنایا گیا تو اس کے اعلان کا اعزاز بھی عمران خان نے مجھے دیا۔ یقینا اس کا فائدہ آنے والی نسلوں کو ہوگا کیونکہ تحریک انصاف نے اس سلسلے میں اہم پیشرفت کی ہے اور قانون سازی بھی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ جب لوگوں کے مسائل ان کے دروازے پر حل ہوں گے تو انہیں صوبے کی اہمیت کا اندازہ ہوگا۔ تحریک انصاف اس عمل کو آگے لے کر چل رہی ہے اور آنے والی کوئی حکومت اسے یہاں سے واپس نہیں کر سکے گی۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ ملتان اور بہاولپور کے سیکرٹریٹ کو عملی شکل دی جانے کے لئے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ ٹیکنالوجی کی وجہ سے ملتان ، بہاولپور، ڈی جی خان کے مسائل ایک جگہ سے حل کئے جا سکتے ہیں۔ میں نے وزیراعلیٰ پنجاب سے درخواست کی ہے کہ جنوبی پنجاب کے لئے علیحدہ پبلک سروس کمیشن بنایا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی نے صوبے کی تقسیم کو قانون سازی سے انتہائی مشکل بنا دیا ہے اور اب یہ قانون موجود ہے کہ الگ صوبے کے قیام کے لئے قومی اسمبلی،سینیٹ اور اسی صوبے کی صوبائی اسمبلی سے بھی دو تہائی اکثریت درکار ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہماری خواہش پر وزیر اعلیٰ پنجاب نے فیصلہ کیا ہے کہ جنوبی پنجاب صوبے کے آئندہ بجٹ کا علیحدہ کتابچہ ہو گا علیحدہ اے ڈی پی ہوگا اور جنوبی پنجاب کا فنڈ لاہور یا کسی جگہ منتقل نہیں ہو سکے گا۔ انہوں نے کہا کہ یہ فیصلہ اتفاق رائے سے ہو چکا ہے کہ ملتان اور بہاولپور سیکرٹریٹ ہوں گے اس سلسلے میں کچھ لوگ رکاوٹیں ڈال رہے ہیں جو ناکام ہوں گے۔ دو سیکرٹریٹ کے حوالے سے اب کوئی ابہام باقی نہیں ہے۔ جاری کردہ نوٹیفیکیشن میں ملتان اور بہاولپور میں دو سیکرٹریٹ کا قیام واضح درج ہے#وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ 5 اگست کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری بدترین کرفیو کو ایک سال مکمل ہو جائے گا۔ میری دعوت پر اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے صدر کل پاکستان آ رہے ہیں۔ جن کو مقبوضہ جموں و کشمیر کی موجودہ صورتحال پر بریفنگ دی جائے گی۔ بھارت کی کوشش ہے کہ پاکستان کو بلیک لسٹ میں دھکیلا جائے لیکن ہم بروقت قانون سازی اور انتظامی اقدامات کی بدولت پاکستان کو دوبارہ گرے لسٹ سے نکال کر وائٹ لسٹ میں لائیں گے۔ قانون سازی کے معاملے پر اپوزیشن جماعتوں سے پیر کو مذاکرات ہوں گے۔ وزیر اعظم عمران خان نے مذاکرتی کمیٹی کا چیئرمین نامزد کرکے مجھ پر اعتماد کا اظہار کیا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سرکٹ ہاوس ملتان میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر چیف وہپ قومی اسمبلی ملک عامر ڈوگر، صوبائی وزیر تونائی ڈاکٹر اختر ملک، ترجمان پنجاب حکومت و پارلیمانی سیکرٹری برائے اطالاعات و ثفاقت ندیم قریشی، معاون خصوصی وزیراعلیٰ پنجاب برائے ٹرانسپورٹ حاجی جاوید اختر انصاری، ارکان صوبائی اسمبلی حاجی سلیم لابر، سبین گل، چیرمین ایم ڈی اے میاں جمیل احمد، تحریک انصاف کے ضلعی صدر خالد جاوید وڑائچ اور سٹی جنرل سیکرٹری سید بابر شاہ سمیت دیگر رہنما موجود تھے۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے منتخب صدر میری دعوت پر کل پاکستان آئیں گے۔ صدر جنرل اسمبلی کو اقوام متحدہ کے 75 ویں اجلاس سے پہلے مقبوضہ جموں و کشمیر کے حالات سے آگاہ کریں گے۔ 5 اگست کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں بدترین کرفیو کو ایک سال مکمل ہو جائے گا۔ انٹرنیشنل فورم پر مظلوم نہتے کشمیریوں کا مقدمہ لڑنا ہمارا فرض ہے۔ اور ہم اس ساری صورتحال سے اقوام متحدہ کے صدر کو آگاہ کریں گے کیونکہ ایک سال گزرنے کے باوجود مقبوضہ وادی میں بدترین کرفیو اور مظالم جاری ہے۔ وادی کے مکینوں کو کورونا وائرس جیسی وباءکے باوجود ادویات تک کی سہولت میسر نہیں ہے اور مساجد میں جانے پر بھی پابندی ہے۔ بھارت مسلسل لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کر رہا ہے۔ نہتے شہریوں کا قتل عام کر کے بھارت انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی نئی حدوں کو چھو رہا ہے۔ آزاد کشمیر کی موجودہ قیادت ، چیئرمین کشمیر کمیٹی اور ساری سیاسی قیادت سے میری بات چیت ہوئی ہے۔ اور میں نے انہیں مقبوضہ کمشیر سمیت تمام صورتحال سے آگاہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان نے پاکستان کو ایف اے ٹی ایف میں بلیک لسٹ کرانے کی کوشش کی۔ حکومت کی کوشش ہے کہ پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال کر وائٹ لسٹ میں واپس لائے۔ ایشیا پیسفک گروپ نے پاکستان کے لئے دی گئی مدت میں فیصلہ کرنا ہے۔ ایف اے ٹی ایف سے متعلقہ 8 اور نیب سے متعلق ایک بل اپوزیشن ارکان کے حوالے کر دیا ہے۔ اپوزیشن اور حکومتی ارکان کی میٹنگ کی صدارت میں کر رہا ہوں۔ کرپشن فری پاکستان ہم سب کی ضرورت ہے، ہمیں مل کر کرپشن کا خاتمہ کرنا ہے۔ قانون سازی کے لئے اگر دیر کی گئی تو ہمیں سنگین صورتحال کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ پیر کو اپوزیشن سے ہونے والے مذاکرات کے بہتر نتائج سامنے آئیں گے اور ہمیں قانون سازی میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی اور ن لیگ کو پانچ، پانچ سال حکومت کرنے کا موقع ملا لیکن انہوں نے اپنے ادوار میں نیب قوانین میں ترامیم کی کوشش ہی نہیں کی۔ لیکن اب یہی جماعتیں نیب قوانین میں ترامیم چاہتی ہیں تو ہم حاضر ہیں اسی لئے ہم نے اپازیشن کے سامنے نیب ترمیم اور ایف اے ٹی کے حوالے سے 9 بلوں کا مسودہ حکومت کے حوالے کر دیا ہے۔ وہ ہفتہ اور اتوار کے دن اپنی قیادت سے مشاورت کرلیں۔ پیر کی شام پانچ بجے میری اپوزیشن سے ملاقات ہوگی اور میں توقع رکھتا ہوں کہ ملکی مفاد میں ہم ایک پیج پر ہوں گے۔ ہم کیونکہ کرپشن فری پاکستان چاہتے ہیں اس لئے ہم کھلے دل کے ساتھ بات چیت کرنے کو تیار ہیں۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں کورونا وائرس سے اپنی صحت یابی پر اللہ تعالیٰ اور دعا کرنے والوں کا شکر گزار ہوں۔ کورونا وائرس سے نمٹنے کے حوالے سے ماہرین کے تجزیے غلط ثابت ہوئے۔ کورونا وائرس سے 12 لاکھ مریض اور 50 ہزار اموات کی پیش گوئی کی گئی تھی۔ لیکن حکومتی پالیسی کی وجہ سے پاکستان محفوظ رہا ہے۔ سمارٹ لاک ڈاو¿ن کی حکمت عملی کورونا وائرس سے نمٹنے کے لئے کار آمد ثابت ہوئی۔اب کورونا وائرس کے کیسز اور اموات میں مسلسل کمی آ رہی ہے لیکن عیدالالضحیٰ اور محرم کے ایام میں ہم کسی غفلت کا شکار ہوئے تو حالات کنٹرول سے باہر ہو سکتے ہیں۔ یہ دو چیلنجز ہیں جن میں ایس او پیز پر عمل کے سلسلے میں علمائ، مشائخ اور تمام طبقات کو تعاون کرنا ہو گا۔ عوام سے اپیل کرتا ہوں کہ عید قربان اور محرم کے موقع پر کورونا وائرس کے حولے سے احتیاط برتی جائے۔ علماء سے گزارش ہے کہ محرم کے دوران ایس او پیز پر عمل کروایا جائے۔ اور اگر حالات بہتر ہوئے تو سکول، کالجز، ریسٹیورینٹ اور دیگر کاروباری سرگرمیاں بحال کرنے کے امکانات روشن ہو جائیں گے۔ انہوں نے پریس کانفرنس کے دوران کورونا وائرس سے شہید ہونے والے نشتر میڈیکل یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر مصطفیٰ کمال پاشا اور انٹیلیجنس کے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل قیوم خان خوگانی کی وفات پر افسوس ہوا اور پی ٹی سی ایل کے عمران گردیزی، انکے بھائی، والد اور تمام اہلخانہ کی کورونا سے جلد صحت یابی کی دعا کی#

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں